نواز شریف کو جوتا ایک سے زیادہ لوگوں نے مارا، عینی شاہد سہیل وڑائچ کا انکشاف
یہ خبر لائیک کریں

ویب ڈیسک – سنئیر صحافی سہیل وڑائچ جو کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کو جوتا پڑتے وقت موقع پر موجود تھے، ان کا کہنا ہے کہ نواز شریف جب جوتا مارا گیا تو اس کے ساتھ اردگرد کھڑے اور لوگوں نے بھی نواز شریف کی جانب جوتے اچھالے لیکن یہ نواز شریف کی خوش قسمتی تھی کے باقی جوتے ان تک نہ پہنچے۔

عینی شاہد سہیل وڑائچ نے یہ بھی بتایا کہ جوتا پھینکنے والا مولوی خادم حسین رضوی کا پیروکار معلوم ہوتا تھا کیونکہ جوتا مارتے وقت وہ لبیک یا رسول اللہ کا نعرہ لگا رہا تھا۔

یاد رہے کہ کل سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف آج جامیعہ نعیمہ لاہور میں ایک تقریب سے خطاب کر رہے تھے کہ ایک شخص نے ان کو جوتا دے مارا۔جوتا سابق وزیر اعظم کے کندھے پر بائیں جانب لگا۔

جوتا مارنے والے شخص نے نعرہ رسالت کے نعروں کے ساتھ نواز شریف کو انتہائی قریب سے جوتا مارا۔ ارد گرد کھڑے مسلم لیگ ن کے ورکروں نے جوتا مارنے والے کو تشدد کا نشانہ بنانا شروع کر دیا۔

سیکورٹی اہلکاروں نے فوراً نواز شریف کو گھیرے میں لے لیا اور جوتا پھینکنے والے کو گرفتار کر لیا۔ گزشتہ رات بھِی مسلم لیگ ن کے رہنما خواجہ آصف کے چہرے پر ایک تقریب کے دوران سیاہی پھینکی گئی تھی۔

یہ خبر لائیک کریں

تبصرہ کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *