عدلیہ مخالف نعرے بازی، اپوزیشن رہنماوٴں کے خلاف دہشتگردی کے مقدمے درج
یہ خبر لائیک کریں

ویب ڈیسک – گذشتہ روز متحدہ اپوزیشن کی جانب سے الیکشن کمیشن کے دفتر کے سامنے انتخابات 2018 میں مبینہ دھاندلی کے خلاف ایک مظاہرہ ہوا۔ مظاہرے میں پیپلزپارٹی، ایم ایم اے، اے این پی اور مسلم لیگ ن کی قیادت موجود تھی۔ مظاہرے میں اپوزیشن لیڈرشپ کے ہوتے ہوئے پاکستان کی عدلیہ کے خلاف شدید نعرے بازی کی گئی اور اعلیٰ عدلیہ کے ججوں کو ننگی گالیاں بھی دی گئیں۔

عدلیہ مخالف نعرے بازی پر اپوزیشن رہنماوٴں کے خلاف آج دہشتگردی ایک کے تحت مقدمات درج کر لئے گئے ہیں۔ تھانہ سیکریٹریٹ کے انچارج محمد محبوب نے بی بی سی کو بتایا کہ ملزمان کے خلاف مقدمہ انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعہ 7 کے علاوہ ضابطہ فوجداری کی دفعہ 228 کے تحت درج کیا گیا ہے جو کہ عدلیہ اور دیگر ریاستی اداروں کے خلاف تقاریر اور نعرے بازی کرنے سے متعلق ہے۔ مقدمے میں  پیپلز پارٹی کی خاتون رہنما شہزادہ کوثر گیلانی کے علاوہ راجہ امتیاز علی کو نامزد کیا گیا ہے۔

سوشل میڈیا پر آئی ویڈیو میں واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے کہ کس طرح کارکن کیمروں کی موجودگی

میں اعلیٰ عدلیہ کے ججوں کو گالیاں دے رہے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق مقدمات درج ہونے کے باوجود اب تک کوئی گرفتاری عمل میں نہیں آئی۔

یہ خبر لائیک کریں

تبصرہ کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *