ہاں میں نے “فکسنگ” کی تھی، دانش کنیریا کا 6 سال بعد اعتراف جرم

ویب ڈیسک -پاکستان کرکٹ پر فکسنگ کا ایک اور داغ،  پاکستانی ٹیسٹ کرکٹر اور لیگ سپنر دانش کنیریا نے بالآخر 6 سال بعد اعتراف جرم کر لیا۔ کہتے ہیں ساتھی انگلش کرکٹر نے سپاٹ فکسنگ پر اکسایا تھا۔

لیگ سپنر دانش کنیریا کو 2009 میں انگلینڈ پولیس نے سپاٹ فکسنگ کے الزام میں گرفتار کیا تھا تاہم 2010 میں انہیں رہا کر دیا گیا تھا۔ دانش کنیریا پر الزام تھا کہ انہوں نے ساتھی انگلش کرکٹر مارون ویسٹ فیلڈ کو بھی میچ فکسنگ پر اکسایا تھا۔

جون 2012 میں دونوں کھلاڑیوں کو کرکٹ کرپشن میں ملوث پایا گیا جس کے بعد انگلش کرکٹ بورڈ نے کاؤنٹی میچ میں سپاٹ فکسنگ کا جرم ثابت ہونے پر 32 سالہ ٹیسٹ بائولر دانش کنیریا پر تاحیات پابندی لگا دی۔

عرب ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے دانش کنیریا نے کہا کہ میں اپنی غلطی پر شرمندہ ہوں، تمام پاکستانیوں، فینز اور ایسکیس کاؤنٹی کے ساتھیوں سے معذرت خواہ ہوں، آئی سی سی یا انگلش کرکٹ بورڈ کے حکام کو معاملے سے آگاہ نہ کرنے پر سخت پچھتاوا ہے۔

آئی سی سی کے اینٹی کرپشن کوڈ کے آرٹیکل 9 کے مطابق کسی بھی کرکٹ بورڈ کی طرف سے پابندی کا مطلب تمام بورڈز کا اسے تسلیم کرنا ہوتا ہے لہذا اس کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے بھی کسی قسم کی کرکٹ سرگرمیوں میں حصہ لینے پر پابندی لگادی گئی۔

6 سال تک عدالتوں میں اپنی بے گناہی ثابت کرتے رہنے کے بعد دانش کنیریا اپنی غلطی کا اعتراف کر لیا۔