چینی مردوں سے شادیاں کرنے کا خوفناک انجام، پاکستانی لڑکیوں کے اعضا بیچے جانے لگے

ویب ڈیسک – سی پیک کے پاکستان میں آنے کے ساتھ ہی بڑی تعداد میں چینی باشندوں نے پاکستان رخ کیا جو کہ پاکستان کے مختلف علاقوں میں سی پیک منصوبوں پر کام کرتے ہیں۔ چینی باشندوں خصوصاً چینی مردوں نے پاکستان میں طویل قیام کے دوران مقامی خواتین سے شادیاں کرنا شروع کر دیں۔

اچھے مستقبل اور چین میں مستقل رہائش کی خواہشمندہ غریب گھرانے کی لڑکیوں نے نو مسلم چینی باشندوں سے دھڑا دھڑ شادیاں کرنا شروع کیں تو سوشل میڈیا پر بھی دھوم مچنا شروع ہو گئی۔ تاہم اب  قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے قانون و انصاف کے اجلاس کے دوران خوفناک انکشاف ہوا ہے کہ کئی چینی باشندے جو پاکستانی لڑکیوں کو بیاہ کر چین لے گئے وہ ان کے اعضا نکال بیچنے جیسے مکروہ اور خوفناک دھندے میں ملوث پائے گئے ہیں۔

اجلاس کے دوران ممبر کمیٹی شنیلا رتھ نے انکشاف کیا کہ پنجاب میں خواتین چینی شہریوں سے شادیاں کر رہی ہیں، چینی شہری غریب بچیوں کو پیسے دیکر شادیاں کر رہے ہیں اور شادی کے بعد ان کے جسم کے اعضا نکال لیتے ہیں۔

یاد رہے کہ گزشتہ چند ماہ سے چینی باشندوں کی پاکستانی لڑکیوں کے ساتھ شادیوں کی خبریں تواتر کے ساتھ سوشل میڈیا کی زینت بنتی چلی آرہی ہیں۔