جاپان جانے والوں کے لئے خوشخبری، جاپانی حکومت نے غیر ملکیوں ہنرمندوں کے لئے ویزے کھول دیئے

ویب ڈیسک – اگر آپ دنیا کے سب سے ترقی یافتہ ملک جاپان جا کر کام کرنے کے خواہشمند ہیں تو آپ کے لئے ایک بڑی خوشخبری یہ ہے کہ جاپان کی حکومت نے برسوں کی پابندی کے بعد غیرملکی ملازمین اور ہنرمندوں کے لئے اپنی ویزہ پالیسی نرم کردی ہے۔نئی ویزہ پالیسی کے تحت جاپانی کمپنی کا ساپنسر لیٹر حاصل کرنے کے بعد آپ باآسانی جاپان جا کر5 سال تک  پیسہ کما سکتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق دنیا کی مضبوط ترین معیشیت اور ترقی یافتہ ملک جاپان نے اپنے ملک میں روزگار کے خواہشمند غیرملکیوں کو بڑی خوشبری دیتے ہوئے اپنی ویزہ پالیسی میں نرمی کر دی ہے۔ جس کے تحت کوئی بھی غیر ملکی کسی بھی جاپانی کمپنی کے ساپنسر لیٹر پر جاپان جا سکتا ہے اور پیسہ کما سکتا ہے۔ جاپان کی حکومت نے طویل عرصے بعد غیرملکی ہنرمندوں اور ملازمین کے لئے اپنی ویزہ پالیسی نرم کی ہے۔ نئی ویزہ پالیسی یکم اپریل سے نافذالعمل ہو چکی ہے۔

جرمنی کے ایک بڑے نشریاتی ادارے نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ جاپان نے پہلے مرحلے میں جن شعبوں کے لئے وزیرے کھولے ہیں ان میں جو فوڈ سروسز، صفائی، تعمیرات، زراعت، ماہی گیری، گاڑیوں کی مرمت اور صنعتی مشینری آپریشن کے شعبے شامل ہیں۔ نئے جاری کردہ ویزوں کی مدت پانچ سال تک مقرر کر گئی ہے۔

ایسے پاکستان جو فوڈ سروسز، صفائی، تعمیرات، زراعت، ماہی گیری، گاڑیوں کی مرمت اور صنعتی مشینری کے کام سے وابستہ ہیں وہ بھی جاپان کی نئی ویزہ پالیسی سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں اور ایک اچھا مستقل بنا سکتے ہیں۔

جاپان کی تاجر برادری نے اس حکومتی فیصلے اور ویزے کے قواعد و ضوابط میں نرمی کا خیرمقدم کیا ہے۔ یاد رہے کہ جاپان میں  افرادی قوت کا مسئلہ چوبیس گھنٹے کھلنے والے اسٹوروں کو دیکھ کر مزید واضح ہو جاتا ہے۔ افرادی قوت کی کمی کی وجہ سے ایسے اسٹورز کے مالکان کو شدید مشکلات کا سامنا ہے کیوں کہ فرنچائز معاہدوں کے تحت انہیں لازمی طور پر چوبیس گھنٹے سروس فراہم کرنا ہوتی ہے۔