سری لنکا مین دھماکوں سے مرنے والوں کی تعداد 290 سے تجاوز کر گئی، ملک بھر میں 2 دن کیلئے کرفیو نافذ، سوشل میڈیا بھی بند

ویب ڈیسک – سری لنکا میں گذشتہ روز ایسٹر کے موقع پر ہونے والے 8 بم دھماکوں میں مرنے والوں کی تعداد 290 سے تجاوز کر گئی ہے، جبکہ دھماکوں کے بعد پورے سری لنکا میں 2 دن کے لئے کرفیونافذ کر دیا گیا اور افواہوں کی روک تھاک کے لئے سوشل میڈیا کو مکمل طور پر بند کر دیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سری لنکا میں ایسٹر کے موقع پر 8 مختلف بم دھماکوں میں غیر ملکیوں سے سمیت 290 سے زائد افراد ہلاک اور 500 سے زائد زخمی ہو گئے تھے۔ مرنے والے 35 غیر ملکیوں میں امریکی اور برطانوی شہری بھی شامل ہیں جبکہ 5 پاکستانیوں کے زخمی ہونے کی بھی اطلاعات ہیں۔

دھماکوں میں گرجا گھروں اور ہوٹلوں کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ ایک چرچ کو سری لنکا کے دارالحکومت کولمبو اور دوسرے  کو کولمبو کے شمال میں نیگومبو کے علاقے میں چرچوں کو اس نشانہ بنایا گیا جب وہاں بڑی تعداد میں مسیحی برادری کے لوگ ایسٹر کی تقریبات منا رہے تھے۔

جبکہ کوچھی کاڈے، کٹواپٹیا اور بٹیکالوا میں تین گرجا گھروں کو نشانہ بنایا گیا ہے جبکہ دارالحکومت کولمبو میں تین ہوٹلوں دی شینگریلا، سینامن گرانڈ اور کنگز بری کو نشانہ بنایا گيا۔

دھماکوں کے بعد وزیراعظم عمران خان کی جانب سے جانی نقصان پر افسوس کا اظہار کیا گیا تھا اور سری لنکا کی ہر ممکن مدد کرنے کے عزم کا اظہار بھی کیا تھا۔ اسی سلسلے میں پاکستان نے سری لنکن حکومت کی اپیل پر ڈاکٹر ہمایوں تیمور کی سربراہی میں تین رکنی فرانزک ٹیم سری لنکا بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔

 

ایسٹر کے موقع پر سری لنکا میں دہشت گردی، 6 بم دھماکوں میں 138افراد ہلاک، 500 سے زائد زخمی