ملک میں اگر کوئی دہشتگری کا واقعہ ہوا تو مقدمہ موبائل کمپنی کے سربراہ کیخلاف ہو گا: سپریم کورٹ کا بڑا اعلان

ویب ڈیسک – آج سپریم کورٹ آف پاکستان میں موبائل فون سروس بند کرنے سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی، سماعت کے دوران موبائل فون کمپنیوں کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ ہ معمولی معمولی باتوں پر موبائل فون سروس بند کردی جاتی ہے۔ترکی کا صدر دورہ کرے یا وزیراعظم کاجلسہ ہو،موبائل فون سروس بند کردی جاتی ہے۔

سماعت کے دوران س پر جسٹس اعجاز الاحسن نے موبائل کمپنیوں کے وکیل سے مخاطب ہوتے ہوئے  کہا کہ اگر ملک میں کوئی دہشت گردی کا واقعہ ہوا توموبائل کمپنی کے سربراہ پر دہشتگردی کا مقدمہ ہوگا۔انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے قانون میں ترمیم ہونے دیں پھر دیکھیں گے۔

یاد رہے کہ پاکستان میں اہم تہواروں اور بین الاقوامی لیڈرز کے اہم دوروں کے دوران کئی شہروں میں موبائل فون سروس بند  کر دی جاتی ہے جس سے شہریوں کوشدید اذیت  کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔