نوازشریف اور زرداری اربوں ڈالر دینے پر راضی ہو گئے، لندن میں مذاکرات جاری، ریٹائرڈ جنرل کا بڑا دعویٰ

ویب ڈیسک – مسلم لیگ ن کے تاحیات سربراہ نوازشریف اور سابق صدر پاکستان آصف علی زرداری کے حوالے سے ایک ریٹائرڈ جنرل نے دعویٰ کیا ہے کہ دونوں پارٹیاں اپنے خلاف مقدمات ختم کرنے کے عوض اربوں ڈالر دینے کو تیار ہو گئے ہیں اور یہ ڈیل کے معاملات برطانیہ کے شہر لندن میں طے کئے جا رہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی کے ایک ٹاک شو میں جنرل ریٹائرڈ امجد شعیب نے لائیو ٹی وی پر دعویٰ کیا ہے کہ  میری اطلاعات کے مطابق دونوں پارٹیاں حکومت کی جانب سے ریلیف لینے کیلئے اربوں ڈالر دینے کو تیار ہیں، جس کے لئے معاملات برطانیہ میں طے کیے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ باوثوق ذرائع سے خبر موصول ہوئی ہے کہآصف زرداری اور نواز شریف پیسہ دینے کیلئے راضی ہوگئے ہیں۔ اطلاعات یہی ہیں کہ دونوں پارٹیاں ریلیف کے حصول کیلئے پیسہ دے کر جان چھڑوانا چاہتی ہیں۔

تحریک انصاف کی وفاقی حکومت خود بھی کہہ چکی ہے کہ وہ نواز شریف اور آصف زرداری کو بنا کسی مقصد کے جیل میں رکھنے کے خواہش مند نہیں ہیں۔ دونوں پارٹیوں کے سربراہاں لوٹا ہوا پیسہ واپس کرکے اپنی جان بخشی کروا سکتی ہیں۔ ان باتوں کا اظہار سابق وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کیا تھا۔

یاد رہے  کہ اس سے پہلے ایک صحافی نے دعویٰ کیا تھا کہ نواز شریف سے 25 ارب ڈالر مانگے گئے ہیں جبکہ وہ 6 ارب ڈالر دینے پر رضامند ہیں اور وہ بھی اس شرط پر کہ ان کے اس معاہدے کو خفیہ رکھا جائے اور مریم نواز پاکستانی سیاست میں اِن رہیں گے اور نواز شریف بیرون ملک روانہ ہو جائیں گے۔

اس کے علاوہ صدر مسلم لیگ ن شہباز شریف کی لندن روانگی کے بعد بھی ایسی کئی اطلاعات آتی رہی ہیں کہ شہباز شریف نے اپنے بھائی کو بچانے کے لئے لندن میں سرگرم ہیں۔

معروف صحافی عارف نظامی نے بھی اس حوالے سے دعویٰ کیا تھا کہ نواز شریف کی اگلی منزل جیل نہیں لندن ہے۔ یاد رہے کہ نواز شریف کی ضمانت 6 مئی کو ختم ہو رہی ہے۔