چئیرمین نیب کی ویڈیو منظر پر لانے والے چینل کا مالک طاہر خان وزیراعظم کا مشیر خاص نکلا، عہدے سے برطرف

ویب ڈیسک – چئیرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کی لیک ویڈیو منظر پر لانے والے چینل نیوز ون کے بارے میں انکشاف ہوا ہے کہ وہ وزیراعظم عمران خان کے مشیر خاص طاہر خان کی ملکیت ہے۔ وزیراعظم نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے طاہر اے خان کو فوری طور پر عہدے سے برطرف کر دیا ۔

تفصیلات کے مطابق گذشتہ رات چئیرمین نیب کے حوالے سے آنے والی خبر نے پورے ملک کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا۔ رات و رات چئیرمین نیب کی تین سے چار غیر اخلاقی ویڈیوز سوشل میڈیا پر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئیں۔ یہ خبریں پھیلانے میں سب سے پہلے قدم نجی ٹی وی چینل نیوز ون نے اٹھایا۔ جس نے جسٹس ر جاوید اقبال کی ایک غیر اخلاقی گفتگو پر مبنی آڈیو ٹیپ بریکنگ نیوز کے طور پر چلائی۔ اب انکشاف ہوا ہے کہ چینل نیوز ون وزیراعظم عمران خان کے مشیر خاص طاہر اے خان کی ملکیت ہے اور اب اس سارے معاملے میں تحریک انصاف کے کردار کو بھی شک کی نگاہ سے دیکھا جا رہا ہے۔ تاہم عمران خان نے رات گئے سارے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے طاہر خان  کو بطور اپنے مشیر فوری طور پر برطرف کر دیا۔

نیب ذرائع کے مطابق نیوزون چینل کے سی ای او سید عمر پر اس وقت کئ مقدمات ہیں اور وہ نیب کی حراست میں بھی رہ چکے ہیں۔ نیوز ون کے سی ای او سید عمر کو نیب کے 2018 میں ریفرنس نمبر 28 میں ملزم قرار دیا گیا تھا، وہ کراچی واٹر بورڈ کی 25 ایکٹر سرکاری زمین پر قبضہ کرنے میں ملوث تھا۔

دوسری طرف لیکڈ ویڈیوز میں چئیرمین نیب کے ساتھ نظر آنے والی خاتون طیبہ گل کے بارے میں بھی سنسنی خیز انکشافات ہوئے ہیں۔ طیبہ گل اور چئیرمین نیب کی ملاقات تین برس قبل اس وقت ہوئی جب جسٹس جاوید اقبال مسنگ پرسن کے معاملے کو دیکھ رہے تھے۔ تب ہی طیبہ گل چئیرمین نیب سے ملنے ان کے دفتر آئی اور اپنے عزیز کی گمشدگی کے بارے میں اپنا دکھڑا سنایا اور یوں ملاقاتوں کے سلسلے بڑھتے گئے۔ طیبہ گل کے بارے میں انکشاف ہوا ہے کہ وہ اور اس کا شوہر فاروق نول  ایک مکملل گینگ  کے طور پر کام کرتا ہے اور شہر اقتدار میں کئی سرکاری افسران کو خواتین کے ذریعے رابطہ کرکے بلیک میل کرنے اور کرپشن کے علاوہ کئی کیسز میں رعایت لینے کے کام پر جتا ہوا ہے۔

فاروق نول پہلے ہی نیب لاہور کی حراست میں ہے اور اب اس کی بیوی طیبہ گل کو بھی نیب نے حراست میں لے لیا ہے۔

یاد رہے کہ چئیرمین نیب کے حوالے سے ہوشربا انکشافات سامنے آرہے ہیں، نیوزون نے خبر چلائی لیکن پھر اپنی ہی خبر کی تردید کر دی جس لگا شاید چئیرمین نیب کے خلاف کوئی سازش کی گئی ہے۔ لیکن اب چئیرمین نیب کو دو اور ایسی نازیبا ویڈیوز منظر عام پر آئی ہیں کہ ہر کوئی توبہ توبہ کر اٹھا۔

تفصیلات کے مطابق چئیرمین نیب جسٹس ر جاوید اقبال کی ایک خاتون کے ساتھ ویڈیوز سوشل میڈیا پر وائرل ہورہی ہیں جس میں انہیں ایک خاتون کے ساتھ گفتگو کرتے دیکھا جا سکتا ہے۔ دونوں کے درمیان ہونے والی گفتگو خاصی ذومعنی اور ذاتی نوعیت کی ہے۔ ویڈیوز بظاہر خفیہ طریقے سے بنائی گئی ہیں جس سے لگتا ہے کہ خاتون نے چئیرمین نیب کو بلیک میل کرنے کے لئے انہیں سوشل میڈیا پر وائرل کیا ہے۔

دوسری جانب  نیب دفتر سے سارے معاملے کی تردید کی گئی اور مذکورہ چینل کے خلاف کارووائی کا اعلان کئے جانے کے بعد نجی چینل نے یوٹرن لیا اور نہ صرف اپنی ویب سائٹ سے ویڈیو کو ہٹا دیا بلکہ چینل نے آن ائیر معافی بھی مانگ لی۔ جبکہ  چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ کسی قسم کی بلیک میلنگ میں نہیں آؤں گا، اپنے مقصد پر ڈٹا رہوں گا اور احتساب کا عمل جاری ہے گا۔

چینل کی جانب سے معافی میں کہا گیا کہ یہ مواد غیر تصدیق شدہ تھا اور اس سارے معاملے میں چئیرمین نیب سمیت جن جن کی دل آزاری ہوئی نیوز ون چینل ان سب سے معافی مانگتا ہے