اللہ سے وعدہ کیا تھا پاکستان لوٹنے والوں کو نہیں چھوڑوں گا: عمران خان

میانوالی – وزیراعظم عمران خان نے ملک میں جاری احتساب کے عمل کو پورے زور و شور سے جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ میں نے اس دن کے لئے 22 سال انتظار کیا ہے۔ میں نے اللہ سے وعدہ کیا تھا کہ ایک بار موقع ملا تو اس ملک کو لوٹنے والوں کو نہیں چھوڑوں گا۔ یہ لوگ جتنے مرضی ڈرامے کر لیں، میں انہیں نہیں چھوڑوں گا۔

تفصیلات کے مطابق میانوالی میں جدید ہسپتال کو سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ میانوالی میں جدید ہسپتال بننے سے یہاں کے لوگوں کو علاج کی بہترین سہولیات میسر ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ جب میں نے اس علاقے میں یونیورسٹی بنانے کا سوچا تو لوگوں نے کہا کہ یہ ممکن نہیں اور آج نمل سے کئی طلبا پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کر رہے ہیں۔

تقریب میں موجود وزیراعظم کے دوست انیل مسرت کو مخاطب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ آپ نے کہا آپ کی اردو اچھی نہیں لیکن میں یقین دلاتا ہوں کہ آپ کی اردو بلاول بھٹو زرداری سے اچھی ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے ملک میں جاری احتساب پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ میں نے 22 سال اس دن کا انتظار کیا ہے۔ میں نے اللہ سے وعدہ کیا تھا کہ مجھے ایک بار موقع ملا تو میں اس ملک کو لوٹنے والوں کو نہیں چھوڑوں گا۔ انہوں نے کہا کہ میں کسی کو این آر او نہیں دوں گا۔ یہ لوگ دوسرے ملکوں سے سفارشیں کروا رہے ہیں لیکن میں ان کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ ان سے کوئی ڈیل نہیں ہو گی۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ مجھے عدالت میں صادق اور امین ثابت ہونے کے لئے 60 سے زائد دستاویزات جمع کروانا پڑیں ، میں نے اپنی پوری کمائی کی منی ٹریل عدالت میں جمع کروائی۔ جب رسیدیں ہوں تو نکل ہی آتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ 10 سال میں ملک کا قرضہ 6 ہزار سے 30 ہزار ارب ہو گیا ہے۔ آج ہمارا حال یہ ہے کہ ہم قرضوں کا سود واپس کرنے کیلئے مزید قرضے لے رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جو لوگ آج گرفتاریوں پر شور مچا رہے ہیں  انہوں نے اپنی غیر قانونی جائیدادوں کے کوئی ثبوت پیش نہیں کیے، بلکہ جعلی دستاویزات پیش کیں اور مسلسل جھوٹ بول رہے ہیں لیکن ان کو جواب دینا پڑے گا۔