پاکستان کا بھارت کے ساتھ تمام تعلقات منقطع اور 15 اگست کو بھارت کا یوم آزادی بطور یوم سیاہ منانے کا فیصلہ

اسلام آباد ۔ بھارت کی جانب سے کشمیر کا خصوصی درجہ ختم کرنے اور لائن آف کنٹرول پر جاری جارحیت کے خلاف پاکستان نے اپنا پہلا بڑا رد عمل دے دیا۔ وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے قومی سلامتی کونسل کمیٹی کے اجلاس میں پاکستان نے بھارت کے ساتھ تجارت سمیت تمام تعلقات معطل کرنے کا اعلان کر دیا۔ بھارت کا رویہ درست ہونے تک تمام تعلقات منقطع رہیں گے۔

تفصیلات کے مطابق قوم کو جس رد عمل کا انتظار تھا وہ آگیا۔ آج اسلام آباد میں وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کا ایک اہم اجلاس ہوا۔ اجلاس میں بھارت کی جانب سے کشمیر کا خصوصی درجہ ختم کرنے کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پر غور کیا گیا۔ اس اہم اجلاس میں  وزیرخارجہ، وزیردفاع، چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، ایئرچیف،  نیول چیف سمیت ڈی جی آئی ایس آئی اور دیگر نے شرکت کی۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ  بھارت سے ہر قسم کی تجارت فوری طور پر معطل اور سفارتی تعلقات محدود کیے جائیں گے۔ دونوں ممالک کے درمیان باہمی انتظامات کا ازسرنو جائزہ لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے جب کہ مقبوضہ کشمیر کا معاملا اقوام متحدہ میں اٹھایا جائے گا، اس کے علاوہ  14 اگست کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے طور پر منانےاور 15 اگست کو بھارت کے یوم آزادی پر یوم سیاہ منانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ بھارت نے ایک صدارتی حکم نامے کے بعد مقبوضہ کشمیر کو حاصل خصوصہ درجہ ختم کرتے ہوئے اسے انڈین یونین میں شامل کرنے کا اعلان کیا تھا۔ پاکستان نے بھارتی حکومت کے اس فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے اقوام متحدہ سمیت تمام بین الاقوامی اداروں میں جانے کا اعلان بھی کر دیا ہے۔