ویب ڈیسک ۔ معروف مذہبی سکالر اور عالم دین ڈاکٹر ذاکر نائیک نے دعویٰ کیا ہے کہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے کشمیر پر غیر آئینی اقدامات پر ان کی حمایت مانگی اور بدلے میں ان قائم کئے گئے تمام جعلی مقدمات ختم کرنے کی آفر کی۔

تفصیلات کے مطابق ایک ویڈیو پیغام میں معروف بھارتی اسلامی سکالر اور عالم دین ڈاکٹر ذاکر نائیک نے دعویٰ کیا ہے کہ  مودی سرکار نے   ان سے 05 اگست کو کشمیر کی خصوصی حیثیت کو منسوخ کرنے کے فیصلے کی حمایت کرنے کو کہا  اور بدلے میں  ان کے خلاف بنائے گئے تمام جعلی مقدمات ختم کرنے اور بھارت واپس آ کر تبلیغ کا کام شروع کرنے کی پیش کش کی جس کو انہوں نے ٹھکرا دیا۔

ڈاکٹر ذاکر نائیک کا کہنا تھا کہ بھارتی وزیر داخلہ امیت شا کے براہ راست حکم پر ان سے ملنے آئے تھے ۔ ان کا کہنا تھا کہ مودی سرکارمسلم ممالک کے ساتھ تعلقات کو بہتر کرنے کے لیے ڈاکر ذاکر کے روابط کو استعمال کرنا چاہتی ہے۔

یاد رہے کہ ڈاکٹر ذاکر نائیک گزشتہ کئی برسوں سے بھارت سے روپوش ہیں ۔ ان پر ان کی تنظیم پر بھارت میں منی لانڈرنگ اور کرپشن سمیت کئی دوسرے الزامات میں کیس چل رہے ہیں۔ ذاکر نائیک ان دنوں ملائیشیا میں روپوش ہیں۔