چین سے آئے N95 ماسکز پر سندھ اور وفاق میں کشیدگی شدت اختیار کر گئی

ویب ڈیسک ۔ گزشتہ رات برادر ملک چین کی ای کامرس ویب سائٹ علی بابا کی جانب سے پاکستان کو کرونا وائرس سے لڑنے کے لئے این 95 ماسکس، ٹیسٹنگ کٹس اور دیگر سامان کی ایک بڑی کھیپ بطور امداد کراچی پہنچا دی گئی۔

اس امداد میں خاص قسم کے فیس ماسکس N95 پانچ لاکھ کی تعداد میں موجود ہیں۔ بظاہر یہ امداد چین کی جانب سے پاکستان کو فراہم کی گئی لیکن حکومت سندھ نے اسے سندھ کے عوام کی ملکیت قرار دے دیا۔ وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ اور چئیرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو نے فوراً ٹویٹ کئے اور کہا کہ یہ امداد سندھ کی دی گئی ہے لیکن سندھ اب باقی صوبوں کو امداد دے گا اس لئے 5لاکھ ماسکس میں 2 لاکھ سندھ نے خود رکھ لئے اور باقی ماندہ 3 لاکھ ماسکس پورے پاکستان میں تقسیم کر نے کا اعلان کر دیا۔

حکومت سندھ کی جانب سے اس اعلان کے بعد وفاق اور سندھ سرکار کے درمیان ٹویٹر پر جنگ شروع ہو گئی۔ حکومتی ترجمان شہباز گل نے بلاول اور مراد علی شاہ کے ٹویٹ کے جواب میں کہا کہ ویسے اس سے زیادہ منافقت کیا ہو گی۔ ایک طرف آپ کہتے ہیں بھائی چارہ کریں۔دوسری طرف عالم یہ ہے کہ آپ اور آپ کا چئیرمین اور وزیراعلی صاحب سب ایک جھوٹی بات پر ٹویٹ کرتے ہیں۔ اور جھوٹی بات کا کریڈٹ لینے کی ناکام کوشش کرتے ہیں۔ ہمیں تو آج تک یہی پتہ تھا کہ آپ 10% ہیں آپ تو 40 % نکلے۔

انہوں نے ایک دوسرے ٹویٹ میں علی بابا کے آفیشل ٹویٹر اکاوٴنٹ کو شئیر کیا جس میں واضح طور پر کہا گیا کہ یہ امداد سندھ حکومت کو نہیں پاکستانی عوام کے لئے نیشنل ڈیزاسٹر منیجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کو دی گئی جو کہ اسےپورے ملک میں بانٹے گی۔ ساتھ ہی شہباز گل نے لکھا کہ یہ ہے آپ کی غلط بیانی کا ثبوت @BBhuttoZardari@MuradAliShahPPP ویسے حد ہے غلط بیانی کی بھی کوئی وجہ ہوتی ہے۔Quote Tweet

دوسری جانب ملک میں اس وقت کرونا وائرس سے متاثر کنفرم مریضوں کی تعداد ایک ہزار سے تجاوز کر گئی ہے۔ نیشنل کرونا کمانڈ اینڈ کنٹرول اتھارٹی کے مطابق ملک میں کرونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کی تعداد 1102 ہو چکی ہے جبکہ کرونا سے اب تک 8افراد جاں بحق اور 21 صحتیاب ہو چکے ہیں۔