حکومت نے ملک بھر میں لاک ڈاوٴن میں 14 اپریل تک توسیع کر دی

ویب ڈیسک ۔ ملک بھر میں کرونا وائرس کے بڑھتے ہوئے کیسز کو مد نظر رکھتے ہوئے حکومت پاکستان نے ملک جاری لاک ڈاوٴن کی مدت میں 14 اپریل تک اضافہ کر دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق  وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں فیصلہ ہوا کہ کرونا وائرس کا پھیلاؤ روکنے کیلئے 2 ہفتے تک لاک ڈاوٴن جاری رکھا جائے گا تاہم ملک بھر میں گڈز ٹرانسپورٹ بحال رہےگی۔

 اسد عمر نے قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں ہونے والے فیصلوں سے متعلق پریس بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ کھانےپینےکی اشیا،ادویات کی دکانیں کھلی رکھنابہت ضروری ہے۔ صوبوں کےوفاق سےموثر روابط کے ذریعے صورت حال سے نمٹنے میں آسانی ہوگی۔ تمام حکومتوں نے کورونا کو پھیلنے سے روکنا ہے۔غریب طبقےکااحساس حکومت کی ذمہ داری ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ا کہ بیرون ملک سے آنے والوں کی وجہ سے ملک میں کورونا وائرس آیا، ہم نے کورونا کو پھیلنے سے روکنا ہے۔ کورونا کا پھیلاؤ روکنے کیلئے مزید 2 ہفتے تک بندشیں جاری رکھی جائیں گی۔

صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے قومی سلامتی معید یوسف کا کہنا تھا کہ پی آئی اے کی پروازیں بیرون ملک میں پھنسے مسافروں کو لائیں گی ۔ بیرون ملک پھنسے  2ہزار کے قریب پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے لیے 3سے 11اپریل کے دوران 17 پروازیں چلیں گی۔

میڈیا کو بریفنگ کے دوران  ڈاکٹر ظفر مرزا کا کہنا تھا کہ پاکستان میں مشتبہ کیسزکی تعداد 17331 ہے۔ 8 ہزار 893 لوگ قرنطینہ میں ہیں جن میں سے پانچ ہزار 190 کے نتائج فائنل کیے جا چکے ہیں۔ ان میں سے 19 فیصد کے ٹیسٹ مثبت آئے۔ 82 لوگ مکمل طور پر صحت یاب ہوئے۔

یاد رہے کہ پاکستان میں کرونا وائرس سے متاثر مریضون کی تعداد 2017 تک پہنچ چکی ہے۔ جس میں سے  26 افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔ مریضوں میں 10 کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے جبکہ 82 صحتیاب ہوکر گھروں کو جا چکے ہیں۔اس وقت صوبہ پنجاب میں کرونا وائرس کے 740 کیس رپورٹ ہو چکے ہیں جبکہ صوبہ سندھ 676، خیبر پختونخوا 253، بلوچستان 158، گلگت بلتستان 184، اسلام آباد 54 جبکہ آزاد کشمیر میں 6 کرونا وائرس کے کنفرم مریض ہیں۔