ویب ڈیسک ۔ آج جمعہ کے روز سندھ حکومت نے کرونا وائرس کے خطرات کے پش نظر پورے صوبے میں دن 12 بجے سے سہہ پہر 3 بجے تک مکمل لاک ڈاوٴن کیا۔ اس کی ایک بڑی وجہ گذشتہ جمعہ کے روز لاک ڈاوٴن کے باوجود شہریوں کی ایک بڑی تعداد کا مساجد میں اکٹھا ہونا تھا۔

تاہم کراچی کے علاقے لیاقت آباد کے مکینوں نے حکومتی پابندی کو ہوا میں اڑا دیا اور ساتھ ڈیوٹی پر مامور پولیس اہلکاروں پر مساجد بند کروانے کے الزام میں حملہ کر دیا۔ سوشل میڈیا پر گردش کرتی ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ سینکڑوں کی تعداد میں علاقہ مکین چند پولیس اہلکاروں پر جلوس کی شکل میں حملہ آور ہو رہے ہیں۔

علاقہ مکینوں کی جانب سے پولیس اہلکاروں پر حملے کے بعد مختلف سیاسی و سماجی شخصیتوں نے اس حملے کو بے وقوفانہ اور جاہلانہ عمل قرار دے دیا ہے۔ پاکستان تحریک انصاف کے رہنما ڈاکٹر عامر لیاقت نے ٹویٹر پر کہا کہ ” کیاقت آباد بلاک ۷ غوثیہ مسجد کے امام نے عوام کو مسجد میں آنے کے لیے لاؤڈ اسپیکر پر آوازیں دیں، جب جم غفیر کو پولیس اہل کاروں نےروکنے کی کوشش کی تو پولیس پر حملہ کردیا ٹھیک ہے جمعہ المبارک کی عادت ایمان ہے مگر ایمان روح و جسم کے ساتھ ہے اللہ کے واسطے ایمان کے لیے اپنے آپ کوبچاؤ!”

تبصرہ کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *