عمران خان کی جرات مندی اور ایک تیر سے پانچ شکار

شوگر سبسڈی سکینڈل کی رپورٹ منظر عام پر آ گئی ہے اور اس رپورٹ پر طرح طرح کے تبصرے بھی کئی جا رہے ہیں لیکن تجزیہ نگاروں کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے اس رپورٹ کو جاری کر کے نہ صرف بڑی جرات مندی کا ثبوت دیا ہے بلکہ اس کے ساتھ ساتھ عمران خان کے ایک تیر سے پانچ شکاربھی کئے ہیں۔

رؤف کلاسرا کا کہنا تھا کہ اتحادی حکومت اور ساتھیوں کی بلیک میلنگ کے باوجود وزیراعظم عمران خان نے بڑی جرات مندی کا مظاہرہ کیا ہے کہ انکوائری رپورٹ پبلک کردی، ماضی میں ایسا کسی وزیراعظم نے نہیں کیا۔ ماضی میں یہ طریقہ کاررہا ہے کہ انکوائری رپورٹ دبادی جائے۔

رؤف کلاسرا کا مزید کہنا تھا کہ وزیراعظم عمران خان پر جہانگیرترین کے حوالے سے طنز ہونا شروع ہوگیا کہ انہوں نے بہت پیسہ خرچ کیا ہے اسلئے وہ ریکور کرلیں۔ یہی وہ دباؤ تھا جس پر خان صاحب نے فیصلہ کی کہ اسکی انکوائری ہونی چاہئے۔

رؤف کلاسرا کے مطابق دلچسپ بات یہ ہے کہ خسرو بختیار کے بھائی مخدوم شہریار کی چار شوگرملز ہیں، انہیں 3.9کی سبسڈی دی گئی، دلچسپ بات یہ ہے کہ ان میں حصہ دار مونس الٰہی اور چوہدری منیر ہیں جو مریم نواز کے سمدھی ہیں۔ چوہدری پرویز الٰہی کی نواز شریف سے نہیں بنتی لیکن چوہدری مونس الٰہی خسرو بختیار اور چوہدری منیر کیساتھ بزنس انٹرسٹ ہیں۔ شریف فیملی کی جیب میں 1.4بلین روپے گئے ہیں۔

آصف زرداری پر طنز کرتے ہوئے رؤف کلاسرا نے کہا کہ مجھے اومنی گروپ پہ ترس آرہا ہے جنہیں صرف 90 کروڑ روپے ملے ہیں۔ عمران خان نے رپورٹ جاری کرکے جہانگیرترین کو بھی ٹائٹ کردیا ہے، چوہدری برادران جو پرپرزے نکال رہے تھے انہیں بھی ایکسپوز کردیا ہے