شاہی خاندان میں بغاوت۔۔؟ سابق فرمانروا شاہ عبداللہ کا صاحبزادہ گرفتار

ریاض (ویب ڈیسک) امریکا میں انسانی حقوق کی تنظیم ہیومن رائٹس واچ نے انکشاف کیا ہے کہ سعودی عرب نے شہزادہ فیصل بن عبداللہ کو حراست میں لے کر قید کر لیا ہے اور ان کے کسی بھی قسم کے رابطہ کرنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

انسانی حقوق کی تنظیم کی رپورٹ کے مطابق سابق بادشاہ عبداللہ کے صاحبزادے شہزادہ فیصل بن عبداللہ کو سیکیورٹی فورسز نے 27 مارچ کو حراست میں لیا تھا۔شہزادہ فیصل کرونا وائرس کی وجہ سے آئسولیشن میں تھے,شاہی خاندان کے ایک فرد میں کرونا کی تصدیق ہوئی تھی۔

خبر ایجنسی’روئٹرز’ کے مطابق سعودی حکام سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے بھی فوری کوئی جواب نہیں دیا۔شہزاد فیصل بن عبداللہ کو ماضی میں کرپشن کے خلاف مہم کے سلسلے میں گرفتار کیا گیا تھا اور پھر 2017 میں رہا کردیا گیا تھا۔

مارچ میں سعودی حکام نے شاہ سلمان کے بھائی شہزادہ احمد بن عبدالعزیز اور سابق ولی عہد محمد بن نائف کو حراست میں لے لیا تھا۔

شہزادہ نائف کو 2017 میں ولی عہد کے عہدے کے لیے محمد بن سلمان کے حق میں دستبردار ہونے کا کہا گیا تھا اور انہیں نظر بند کردیا گیا تھا۔

یہ چہ مگوئیاں بھی سامنےآرہی ہیں کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان سعودی اقتدار پر اپنی گرفت مضبوط کرنا چاہتے ہیں۔اسلئے بغاوت روکنےاور رکاوٹیں ختم کرنے کیلئے گرفتاریاں عمل میں آرہی ہیں