نیوزی لینڈ میں اسلام مخالف پوسٹ کرنے پر بھارتی نژاد عدالتی اہلکار معطل

ویب ڈیسک ۔ مسلمانوں کے خلاف بھارتی دنیا بھر میں اپنی نفرت کا اظہار کر رہے ہیں، خلیجی ممالک کے بعد دنیا کے پرامن ترین ملک نیوزی لینڈ میں بھی بھارتی شہری سوشل میڈیا کے ذریعے بھارتی مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز پیغامات پھیلانے پر زیر اعتاب آ گئے۔

تفصیلات کے مطابق نیوزی لینڈ میں مقیم بھارتی کی جانب سے مسلم مخالف بیانات پر حکومت نے ایکشن لیتے ہوئے کمیونٹی لیڈر کو جوڈیشل آفیسر کے عہدے سے ہٹا دیا ۔آکلینڈ کے ایک مقامی اخبار کی رپورٹ کے مطابق یہ نیوزی لینڈ میں اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ ہے،جس میں ملک کے اندر مذہبی انتشار پھیلائے جانے کے خلاف ایکشن لیا گیا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کی رپورٹس کے ممطابق بھارتی نژاد کانتی لال بھابابھائی پٹیل  سوشل میڈیا پر نفرت آمیز مواد شیئر کرنے پر ولنگٹن کی جوڈیشل آفیسر کی رکنیت سے محروم ہوگئے۔اخبار سے بات کرتے ہوئے ایسوسی ایشن کے وائس پریزیڈنٹ کے مطابق ہمیں کانتی لال کے خلاف ایک مستند شکایت موصول ہوئی ہے۔اسی لیے کانتی لال اب ایسوسی ایشن کا مزید حصہ نہیں ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ کچھ عرصے سے ایسے واقعات دیکھنے میں آ رہے ہیں جس میں بھارتیوں کی دوسرے ممالک میں رہتے ہوئے مسلمانوں کے خلاف نفر ت انگیزا ور اشتعال انگیز پوسٹس سامنے آئیں اور جس کی وجہ سے ان بھارتیوں کو شدید ردعمل کا سامنا کرنا پڑا ہے۔