پیپلز پارٹی کی کے الیکٹرک پر نوازشات کی بارش، معاہدہ سامنے آ گیا

کراچی(ویب ڈیسک) پیپلزپارٹی دور حکومت میں کے الیکٹرک کے ساتھ انوکھا ترمیمی معاہدہ سامنے آگیا۔

نجی ٹی وی چینل سماء کے الیکٹرک اور پیپلز پارٹی کی حکومت کے مابین ایک معاہدہ سامنے لے آیا جس میں اس وقت کی پیپلزپارٹی کی حکومت نے کے الیکٹرک کو ہر قسم کے خسارے سے بری الذمہ قرار دیا اور اربوں روپے کے بقایا جات بھی معاف کر دیے ۔

ترمیمی معاہدہ 2009 کے تحت پیپلزپارٹی نے کےالیکٹرک کے 31 ارب روپے کے بقایاجات معاف کیے جس میں کے الیکٹرک ہر قسم کے خسارے سے بری الذمہ قرار پائی گئی۔ ‏

پیپلزپارٹی حکومت نے کےالیکٹرک کے تمام بقایاجات حکومتی خسارہ قرار دے کر معاف کیے اور معاہدے میں کمپنی کی بینکوں کو ادائیگیوں کی گارنٹی بھی حکومت نے اٹھا لی۔

اسی معاہدے میں ہی وفاق کی جانب سے کےالیکٹرک کو 650 میگاواٹ اضافی بجلی نیشنل گرڈ سے دینے کی شق شامل کی گئی، جو آج بڑھ کر 850 میگاواٹ تک پہنچ چکی ہے۔ترمیمی معاہدے پر اُس وقت کے سیکریٹری پانی وبجلی اور سی ای او کےالیکٹرک کے دستخط موجود ہیں۔

واضح رہے کہ کچھ دن پہلے بلاول نے الزام لگایا تھا کہ وزیراعظم عمران خان کے کے الیکٹرک کے سربراہ عارف نقوی سے ذاتی تعلقات ہیں جنہوں نے وزیراعظم عمران خان کو الیکشن میں فنڈنگ کی، کراچی میں طویل لوڈشیڈنگ کے ذمہ دار عمران خان ہیں جن کی کے الیکٹرک کو پشت پناہی حاصل ہے جبکہ دوسری جانب جس قسم کے معاہدے سامنے آرہے ہیں اسکے مطابق کے الیکٹرک کو سب سے زیادہ فیورز اور مراعات پیپلزپارٹی حکومت نے دی تھیں۔

تبصرہ کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *